مزدوروں کی امانتیں کرپٹ افسران کا روز محشر تک تعاقب کریں گیں

7 Jan 2021 Ferado

کراچی: لیبررائٹس کمیشن آف پاکستان (رجسٹرڈ) کے ترجمان نے کہا ہے کہ مزدور جوہمارے معاشرے کا سب سے زیادہ مظلوم طبقہ ہے اگر اس مظلوم طبقے کا وہ فنڈز جو ان کی حق وہلال کی کمائی سے حاصل کیا گیا فنڈز جو انہوں نے اپنا اور اپنے بچوں کا پیٹ کاٹ کر محکمہ محنت کے اداروں ای او بی آئی،ورکرزبورڈ،سیسی میں امانت کے طورپر جمع کرایا وہ فنڈز مزدوروں کی فلاح وبہبود کے بجائے کرپٹ افسرشاہی خود اپنے اور اپنے بچوں پر خرچ کررہی ہے۔

ترجمان نے کہا کہ انہیں شاید یہ معلوم نہیں کہ ان تینوں اداروں کے ایک کلرک سے لے کر اعلیٰ افسران تک جو مزدوروں کی امانت کے امین ہیں ان کی تنخواہیں ودیگرمراعات افسران سروس کے دوران ایک تو امانت میں خیانت کرتے رہتے ہیں ریٹائرمنٹ کے بعد لاکھوں روپے کی پنشن کے ساتھ ہرماہ لاکھوں روپے کے نزدیک تنخواہیںاپنی پنشن،میڈیکل سہولیات اس فنڈز سے ہی وصول کرتے رہےں یہ ناانصافی نہیں تو اور کیا ہے۔ترجمان نے کہا کہ ہم نے ان اداروں کے بیشتر افسران جنہوں نے ان اداروں کے فنڈز جو امانت کے طور پراداروں میں محفوظ ہوتے ہیں،خیانت کرنے پر ان کی اذیت ناک اموات دیکھی ہیں،انکے گھروں میںپریشانیاں،بربادیاں انکا مقدر بن چکی ہیں ،ان کی یہ بربادیاں مزدوروں کے فنڈز غبن کرنے کی وجہ سے ہوتی ہیں جب تک وہ مزدوروں کی امانت میں خیانت کرتے رہیں گے طرح طرح کے کرپشن کیسز ،ضمانتیں انکا پیچھا کرتی رہیں گیں آج یہ افسران کرپشن کیسز میں ملوث ہوکر جس طرح ذلت کی زندگی گزاررہے ہوتے ہےں یہ ایک مثال ہے۔
ترجمان نے کہا کہ یہ زندگی تومختصر ہے مگر جب روزہ محشر مزدوروں کے ہاتھ انکے گریبانوں میں ہونگے پھر انہیں اللہ کی گرفت سے نکالنے والاکوئی نہیں ہوگا اپنے خاندانوں کو حرام کی کمائی کھلانے والا تو ایک ہوتاہے مگربربادی پورے خاندان کی ہورہی ہوتی ہے اب مزدوروں نے اپنا معاملہ اللہ پرچھوڑدیاہے کہ وہی انصاف کریگا۔اور جب اللہ انصاف کرتاہے توامانت میں خیانت کرنے والوں کو جائے پناہ نہیں ملتی جس طرح کرپٹ افسران نیب،ہائیکورٹ کی لسٹ میں نام آنے سے خود زدہ ہیں وہ اپنے اعلیٰ افسران کو کہتے ہوئے سنے گئے ہیں کہ ہائیکورٹ کو دی جانے والی لسٹ میں انکے نام نہ ڈالے جائیں خواہ کتنا ہی پیسہ درکار کیوں نہ ہو۔

Leave a Reply